Sunday, January 29, 2023

نگاہِ یار

نگــاہِ یــار نــے لــوٹــا بــڑے قــرینے سے
رہــا نـہ واسـطہ مرنـے سے اور  جینـے سے

تـڑپ رہــاہــے مــرا دل، تـڑپ رہـی ہـے جـاں
لــگـالـے یـار مجھےآج اپنے سینـے سے

 جو تــونـےکی ہے کـرم کی نظر ، جزاک اللہ
وگر نہ بات بھی کــوئی کــرے کــمینے سے

خــدائــے پــاک کـا احســاں ہے یہ وجــود ترا
کہ ایک دنیا ہے آباد اس خـزینے سے

!چـڑھا دیا ہے جہـاں تو نے، مجھکو اے رہبـر
نہ پھـیرنا کبـھی ان قربـتوں کے زینـے سے

رہا نہ شـوق مجھـے بـادہ نوشــی کا پیـارے
سکوں ملے گا نظر سے تمہاری پینے سے

تمہاری کشتی ہـے پیـارے نجـات کا ذریـعـہ
اتــارنا نـہ مـجـھـے اپنے اس سفینـے سے

!مرے وجـود کــو تو پاک کــردے اے صفوی
ہــراک طـرح کی کـدورت سے اور کینے سے

میں میکشی کا ہوں یوں منتظر پیارے، خود
کہ جـیـسے جـــام چھــلـکـتا ہے آبگینے سے

مـری طـویـل شـبِ غــم کی بھی سـحـؔر آئـے
مـرقــع ہــو مـری انگـشــتـری نگـینـے سے

ذرا ذرا سـی عــنــایـات ســے گــزر کـــر اب
سـحـؔر بھی خوب ہی پائے ترے خزینے سے

از ✒️مــحــمـــد شبیــر قادری ســـحــؔر اورنگـــ آبــادی ـ

Share

Latest Updates

Frequently Asked Questions

Related Articles

فریاد ببارگاہ خیر العبادﷺ

نتیجۂ فکر: ذیشان احمد مصباحی کس قدر مشک اور عنبر میں نہائی ہوئی ہے صبحِ میلاد...

جان ہے بےتاب

جان ہے بے تاب، اور قلب و جگر پر اضطراب کب بھلا ! ناچیز...

نعتیہ کلام

صوفیانہ کلام