مثال

0
28

 جیسے قطرہ میں ہے دریا کی نمود 
جیسے ذرّہ میں ہے صحرا کا وجود 
روشنائی جس طرح سے حرف میں 
آبِ شیریں جس طرح سے برف میں
 یوں محمدﷺ میں خدا ہے جلوہ گر 
جیسے آئینہ میں آئینہ نگر
 بے حلول و اِتّحادو اِتّصال
 آئینہ میں آئینہ بیں کا جمال
 پھول میں خوشبو نہاں ہے جس طرح 
جسم کے پردہ میں جاں ہے جس طرح 
چشمِ بینا میں بصارت جس طرح 
گوشِ شنوا میں سماعت جس طرح 
یوں ہی احمد میں احد ہے خود نما 
بے گماں بے کیف بے چون و چرا 
بے حلول و اتحاد و اتصال
 حاصل ہے اس کو وصالِ ذوالجلال 
لاشک اﷲ بے شک اﷲ یاد کن
 سینہ را از عشقِ او آباد کن

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here