منقبت در شانِ مولائے کائنات کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم

(درشان مولائے کائنات علی مرتضیٰ کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم منقبت کے اکیس اشعار بہ نسبت تاریخِ شہادت)

جـدھـر دیکھـو جلوہ ہےمولیٰ علی کا
انــوکھــا تجــــلا ہــے مـولـیٰ علی کـا

 رہِ عقبــیٰ رستــہ ہـےمولیٰ علی کا
 عــدو بـھــٹکا پھرتا ہے مولیٰ علی کا

گــدا گـــرچــہ تنــہا ہـے مولیٰ علی کا
ولیــکن سہارا ہے مولیٰ علی کا

مرےسایےسےبھی بـلاکیوں نہ بھاگے
مـرے سـر پہ سـایہ ہے مولیٰ علی کا

فلک محوِ حیرت ہے . ہے کون اونچــا
ہوں میں یا کہ تـلـوا ہےمولیٰ علی کا

 خــدا کـا وہـی ہے نبـی کـا وہـی ہے
جـو مولیٰ علی کا ہے مولـیٰ علی کا

مع المرتضیٰ حق. من المرتضیٰ حق
زحـق ربــط گـہرا ہـے مولیٰ علی کـا

انہیں *”صالح المومنیں”*بولےقرآں
وقــار اتـنا اونـچا ہے مولـیٰ علی کا

ہیں قـرآن میں تذکـرے مرتضیٰ کـے
*”بـلنـدی پـہ رتـبہ ہے مولیٰ علی کا”*

انــا منــک یــا مــرتضی انـت منـــی
نبـی سے یـہ رشـتہ ہے مولیٰ علی کا

و *”من کنـت مولاہ”* ازبــر ہے ہم کـو
ہے جـو مصطفیٰ کا ہے مولیٰ علی کا

 ہـوئیں آفتــیں خــود گــرفـتارِ آفـت
جـو نعـرہ لگـایا ہے مولیٰ علی کا

دعائیں ہوئی مستجاب ایک پل میں
جو پکڑا وسیـلہ ہـے مولیٰ علی کا

ہیں حسنین بیٹےاوربیٹی ہیں زینب
بــڑا پـیـارا کـنبــہ ہـے مولیٰ علی کا

چلـی نـسلِ سرکار مـولیٰ علی سے
گھـرانہ نبـی کـا ہے مولیٰ علی کا

وہ خیبرشکن اشجع الاشجعیں ہیں
شجاعت میں شہرہ ہے مولیٰ علی کا

مـحبت علـی کی نشانی ہے حـق کی
مـرے دل پــہ قبـضہ ہےمولیٰ علی کا

کــلامِ الـہٰــی رفیــقِ عــلــــــــی ہـے
جـو کــوثر ہے دریا ہے مولیٰ علی کا

جسے حق تعالیٰ ہے مبـغوض رکھتـا
وہی بـغـض رکھــتا ہے مولیٰ علی کا

یہ شعر و سخن صدقہٴ پـنجتن ہــے
سحـرؔ سـب عطیہ ہے مولیٰ علی کا

ہوکیوں خوفـ ظلمتـ کادلـمیں سحرؔکے
سحرؔ بھی تو بندہ ہے مولیٰ علی کا

از:مـحمـدشـبیرقـادری سحرؔاورنگـ آبادی

1 COMMENT

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here