کشف اورمعیارِولایت

0
56

ایک مرتبہ حضرت داعی اسلام مدظلہ العالی کی مجلس بافیض میں حاضری کی سعادت حاصل ہوئی۔ آپ نے کشف پر گفتگو کرتے ہوئے ارشادفرمایاکہ کشف دوطرح کا ہوتاہے: ۱۔کشف کونی ۲۔ کشف ایمانی 
کشف کونی یہ ہے کہ کس کے گھر میں کیاہے اور کون اپنے دل میں کیاسوچ رہاہے ،اس طرح کی باتیں کسی پرمنکشف ہوجائیںتویہ معیار ولایت نہیں، کیوں کہ صفت تو سادھوؤں اورجوگیوں کوبھی ان کی ریاضتوں کے ذریعے حاصل ہوجاتی ہے،بلکہ ایسا توشیطان کوبھی حاصل ہے کہ وہ لوگوں کی نیتوں پر مطلع ہوکر ان کو بھٹکانے کے لیے وسوسہ ڈالتاہے۔
کشف ایمانی یہ ہے کہ انسان پر دنیا،نفس و شیطان کی حقیقت اوران کے مکروفریب یوں ہی جہنم کی ہولناکیوں اور جنت کی کامیابیوں کا کشف ہوجائے،اقرارلسانی تصدیق قلبی میں تبدیل ہوجائے اورپھرایمان غیبی ایمان شہودی میں بدل جائے۔اسی معنی میںاللہ تعالیٰ ارشادفرماتاہے:فَكَشَفْنَا عَنْكَ غِطَاءَكَ فَبَصَرُكَ الْيَوْمَ حَدِيدٌ۝۲۲(سورۂ ق) 
ترجمہ: ہم نے تم سے تمہاراحجاب دورکردیا ہےتو آج تمہاری نگاہ تیز ہوگئی ہے۔
یہ قیامت کے دن کی بات ہےکہ اس روز سب کودنیا ،نفس وشیطان اورآخرت کی حقیقت کاکشف ہوجائےگا، اور اس وقت کافر دنیامیں لوٹنے اوراعمال صالحہ کرنے کی تمنابھی کرے گالیکن اللہ کے بندوں پران چیزوں کی حقیقت کا کشف دنیا ہی میں ہوجاتاہے اوراسی وجہ سے وہ دنیامیں رہتے ہوئے بھی دنیا سے جدا ہوکر،اپنے مولیٰ سے تعلق رکھنے والے اور اس کے احکام کی اطاعت کرنے والے ہوتے ہیں اور یہ کشف ایمانی یقینی طورپر معیار ولایت ہے۔

خضرِراہ فروری ۲۰۱۵ء
Previous articleہدایت دینے والا صرف اللہ ہے
Next articleدنیامومن کے لیےقیدخانہ ہے
اڈمن
الاحسان میڈیا اسلامی جرنلزم کا ایک ایسا پلیٹ فارم ہے جہاں سے خالص اسلامی اور معتدل نقطۂ نظر کی ترویج و اشاعت کو آسان بنایا جاتا ہے ۔ساتھ ہی اسلامی لٹریچرز اور آسان زبان میں دینی افکار و خیالات پر مشتمل ڈھیر سارے علمی و فکری رشحات کی الیکٹرانک اشاعت ہوتی ہے ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here