Monday, January 30, 2023

دنیا اک حیرت کدہ ہے

کــہیں روتی ہوئی شبنم ، کـــہیں گل پھاڑتے دامن
کــــہیں نالہ بلب بلبــل ، کــــــہیں ہنستا ہوا گـلشن

کہیں افسردہ شاخِ غم، کہیں ہے خوف کی جھاڑی
کہیں سرسبز ہے کھیتی، کہیں سوکھے پڑےخرمن

کـــــہیں منظـــر بہ منظر ہے حسیں تر ، دید کے قابل
کـــہیں شیخ و ہرہمن کی ، کــہیں جنگ زمین و زن

یہ فرحت کی جگہ ہرگـــز نہیں عبرت کی جا ہے یہ
کہیں روشن بھی ہےظلمتـ،کہیں ظلمتـ بھی ہےروشن

بــــانـــدازِ وفـــا جــور و جــفــا بھی رہتی ہے جاری
ســـحــــرؔ پرہیز از دنیائے رنگ و بو و مـکر وفن

مـحمـدشـبیرقـادری سحرؔاورنگـ آبادی ـ

Share

Latest Updates

Frequently Asked Questions

Related Articles

فریاد ببارگاہ خیر العبادﷺ

نتیجۂ فکر: ذیشان احمد مصباحی کس قدر مشک اور عنبر میں نہائی ہوئی ہے صبحِ میلاد...

جان ہے بےتاب

جان ہے بے تاب، اور قلب و جگر پر اضطراب کب بھلا ! ناچیز...

نعتیہ کلام

صوفیانہ کلام